بریکنگ نیوز

ڈھڈیال میں تیزی کی لہر اٹھ چکی ہے،سید ابرار حسین شاہ

election
ڈھڈیال ( بیورورپورٹ)سابق ناظم ڈھڈیال میجر(ر) سید ابرار حسین شاہ نے کہا ہے کہ ڈھڈیال میں تیزی کی لہر اٹھ چکی ہے اسے اب کوئی نہیں روک سکتا۔ وہ گزشتہ روز چوہدری صفدر مرحوم کی حویلی میں نمبردار گروپ کے زیر اہتمام منعقدہ ایک بڑے انتخابی اجتماع سے خطاب کررہے تھے ۔ انہوں نے کہا کہ ڈھڈیال کے عوام باشعورہو چکے ہیں ۔ اب یہاں دھونس دھاندلی کی سیاست نہیں چلے گی ۔انہوں نے کہا کہ حالیہ بلدیاتی انتخابات بڑی اہمیت کے حامل ہیں۔ لوگوں کو نئی نسل کا مستقبل سنوارنے کیلئے سوچ سمجھ کر اپنے ووٹ کا استعمال کرنا ہوگا۔انہوں نے کہا کہ مذہبی اور قومیتوں کا انتشار اور تفریق پید اکرکے ووٹ حاصل کرنے کے ہتھکنڈے ناکام ہوں گے۔ انہوں نے کہا کہ خودساختہ سرداروں کا مستقبل تاریک ہو چکا ہے۔ مسلم لیگ ن کے نامزد چیئرمین چوہدری اعجازحسین نے اپنے خطاب میں کہا جھوٹ اور منافقت کی سیاست کے دن اب گنے جاچکے ہیں۔نمبردار اور مغل برادری ایک ہو چکی ہے۔ انہوں نے کہا کہ جہاں ناانصافیاں ہو ں گی وہاں بغاوت ہوگی۔ ہم ڈھڈیال میں تھانہ کچہری سیاست کاخاتمہ کریں گے۔انہوں نے کہا کہ ہم کسی کے مخالف تو ہوسکتے ہیں لیکن منافق نہیں ہوسکتے۔ حلقہ کے عوام کوامن ،رواداری ،بھائی چارہ ، ترقی اور بہتر مستقبل کیلئے مسلم لیگ ن کا ساتھ دینا ہوگا۔ وائس چیئرمین حاجی رانا بشیر سراج نے اجتماع سے خطاب کرتے ہو ئے کہا کہ اس حویلی سے انقلاب کا آغاز ہوچکا ہے ۔ ہم عوام کی طاقت سے اپنے مخالفین کو ناکوں چنے چبوائیں گے۔مخالفین مفاد پرستوں کا ٹولہ ہے جس کی وجہ سے لوگوں ان کو چھوڑ کر ہمارے ساتھ شامل ہورہے ہیں۔ چوہدری سجاد منہاس نے کہا کہ مخالفین بھاری لیڈ کادعویٰ کررہے ہیں وہ صرف وارڈ نمبر1میں ہی مقابلہ کرلیں جو جیت گیا ، یہ پگ اس کے سرپر رکھ دی جائے گی۔ انہوں نے کہا کہ سردار گروپ کے پاؤں اکھڑ چکے ہیں۔ اسی لئے انہوں نے اعلیٰ شخصیت کی فوری مدد کا سہارا لینا پڑا۔ اجتماع سے چوہدری وضاحت علی خان، حاجی غلام رضا جعفری، چوہدری سعید ایڈووکیٹ، ملک ندیم اقبال ایڈووکیٹ، نیئر عباس اعوان ایڈووکیٹ، ذوالفقار حسین جعفری، سکندرحیات لطیفال اور چوہدری ساجد بیگ ایڈووکیٹ نے بھی خطاب کیا۔ اجتماع میں نمبر دار گروپ کی جانب سے چوہدری گلزار حسین نمبردار نے نامزد چیئرمین چوہدری اعجاز حسین کو پگ پہنائی۔ اجتماع سے قبل ایک بڑی ریلی نکالی گئی جس میں ایک بڑی تعداد میں موٹرسائیکلز، ٹریکٹرز اوردیگر گاڑیاں شامل تھیں ۔ ریلی جب جلسہ گاہ پہنچی تو ان کا پر تپاک استقبال کیا گیا۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*