بریکنگ نیوز

کیا خوب ایجاد ہے یہ فیس بک

faisalتحریر فیصل شامی
ہیلومیرے پارے پارے دوستوں سنائیں کیسے ہیں امید ہے کہ اچھے ہی ہونگے ، اور یقیناً ہم بھی اچھے ہی ہیں ، دوستوں آپ کو بتلاتے چلیں کہ جس کسی نے بھی فیس بک ایجاد کی ہے کیا خوب کی ہے ،
جی ہاں دور جدید کی ایک ایسی لازول و بے مثال ایجاد ہے کہ کیا کہیں ،،
جی ہاں جب سے فیس بک ایجاد ہوئی تو یوں لگا کہ صدیوں میل دور بیٹھے دوستوں سے رابطے کا آسان اور بہترین ذریعہ بھی بن گیا ، جی ہاں ایک وقت تھا کہ پیغام رسانی کے لئے خط بھیجے جاتے تھے ، اور خط بھیجنے کے لئے باقاعدہ ڈاک کا نظام رائج کیا گیا، تاہم بتلاتے چلیں کہ پیغام رسانی کا باقاعدہ دور اسلامی دور حکومت جب حضرت عمر رضی اللہ عنہ خلیفہء وقت تھے تو ڈاک کے نظام کا باقاعدہ آغاز ہوا ، تاہم آج کی موجودہ صدی میں پہلے پہلے ایک شہر سے دوسرے شہر رابطے کے لئے خط و کتابت ہوتی تھی اور ڈاک خانے پہنچائی جاتی تھی جہاں سے دنیا بھر میں ڈاک پہنچتی تھی اور بزریعہ ڈاک خط ایک جگہ سے دوسری جگہ بھیجنے میں کئی ہفتے لگ جاتے تھے ،
تاہم ڈاک کا نظام ابھی بھی رائج ہے ، لیکن صرف محدود حد تک ہی رہ گیا ہے ،جی ہاں وہ اس لئے کہ پیغام رسانی کے لئے اب موبائل ، انٹرنیٹ ، فیس بک ، ٹوئیٹر، گوگل اور نہ جانے کتنے ہی سائٹس ہیں جن سے آپ گھر بیٹھے دنیا بھر میں جہاں چاہیں اپنے دوستوں عزیز و اقارب سے پل بھر میں نہ صرف رابطہ ہو جاتا ہے بلکہ ان سے گفتگو بھی ہو جاتی ہے ، بہر حال زمانہ ترقی کر گیا ہے ، اور یقیناًزمانے کے ساتھ ساتھ چلنا بھی وقت کی مجبوری ہے ، تاہم سنا ہے اب حکومت فیس بک پر بھی ٹیکس لگا رہی ہے جس سے نوجوان نسل میں بے چینی سی پھیل گئی ہے، نوجوان نسل کا مطالبہ ہے کہ حکومت طلباء کے حال پر رحم کرے ، بہر حال ایک لحاظ سے ہمارے لئے فیس بک اس لحاظ سے اچھی ثابت ہوئی کہ دنیا بھر میں پھیلے ہوئے بہت سے پرانے دوستوں سے بھی رابطہ ہوا اور اور بہت سے نئے دوست بھی بنے اور بہت سے فیس بک پر بنے نئے دوستوں سے بھی ملاقات ہو ئی ،جیسے مجتبیٰ رفیق ، عقیل خان کالمسٹ، محمدعلی راناسمیت بہت سے نئے دوست شامل ہیں۔ تاہم ایسے ہی ایک اور دوست جن کا نام حامد رضا ہے اور فیس بک پر ان سے بھی رابطہ رہتا ہے گزشتہ دنوں لاہور آئے تو مجھے فیس بک مسینجر پر پیغام بھیجا کہ میں لاہور ہوں اور آپ سے ملنا چاہتا ہوں اور جب افطاری کے لئے میں نے انھیں مدعو کیا اور جب وہ ہمارے دفتر پہنچے تو میں انھیں دیکھ کر حیران رہ گیاکیونکہ حامد رضا اسکے بالکل بر عکس تھا جو میں نے سوچا تھا ، جی ہاں نوجوان سا لڑکا سر پر ٹوپی خوبصورت لباس زیب تن کئے ہوئے قریب آیا ۔میں نے سلام کیا اور ا فطاری کا وقت قریب تھا اس لئے پہلے افطاری کو ترجیح دی اور جب افطاری سے فرصت ملی تو پھر ہم نے نوجوان دوست حامد رضا سے گفتگو کا سلسلہ شروع کیا ، بتلاتے چلیں کہ نوجوان حامد رضا ہمارے ملک کے معروف نعت خوان ہیں جنکا تعلق کراچی سے ہے اور لاہور مقامی ٹی وی چینلز پر پروگرام کی ریکارڈنگ کے سلسلے میں آئے تھے اور میرا انٹر نیٹ کنکشن بھی تقریبا چوبیس گھنٹے موبائل پر چالو رہتا ہے۔
جی ہاں ہم بات کر رہے تھے نو جوان نعت خوان جناب حامد رضا کی تو بتلاتے چلیں کہ ہماری بے شمار باتیں ہوئیں تاہم چیدہ چیدہ گفتگو ایک آپ کی نظر کر رہے ہیں ، جی ہاں ہمارے دوست نے دوران گفتگو بتایا کہ نعت خوانی کے دوران دف تو جائز ہے لیکن آلات موسیقی نہیں جس پر ہمیں بھی یقیناًاتفاق تھا ، تاہم ہمیں نوجوان نعت خوان کے ان خیالات سے یقیناًخوشی ہوئی کہ انھوں نے کبھی پیسے کے لئے نعت خوانی نہیں کی ،جی ہاں ہمارے نوجوان دوست کا اس بارے میں مزید کہنا تھا کہ نعت خوانی تو محض رب و نبی ﷺ کی خوشنودی کے لئے ہونی چاہئیے، تاہم نوجوان نعت خوان نے بہت کچھ کہا لیکن ہمارے دوست حامد رضا نے ایک شکوہ یہ بھی کیا کہ پی ٹی وی نے انھیں پروگرام کی ریکارڈنگ کے لئے بلایا لیکن کراچی سے لاہور آنے کے ٹکٹ نہیں دی۔ بہر حال ہمیں اپنے پیارے د وست حامد رضا سے انکی پیاری اور مسحور کن آواز میں خوبصورت نعت شریف سننے کا شرف بھی حاصل ہوا ،بہر حال ابھی ہماری گفتگو جا ر ی تھی لیکن وقت گزرنے کا پتہ نہ چلا اچانک ہمارے نوجوان دوست حامد رضا کے موبائل فون کی گھنٹی بجی اور انھوں نے ہم سے اجازت لی ، اور ہم نے بھی دوبارہ ملنے کا عندیہ دیتے ہوئے نوجوان دوست کو الوداع کیا، یقیناًنوجوان نعت خوان حامد رضا سے ملاقات کر کے اور انکی باتیں سن کر یقیناًبہت اچھا لگا ، اور اسی لئے تو ہم کہ رہے تھے کہ اللہ بھلا کرے جس کسی نے بھی فیس بک بنائی ہے عوام کا فائدہ ہی کیا ہے جی ہاں دنیا بھر کے کسی بھی کونے میں جہاں کہیں چاہیں بلاجھجک ملاقات کر سکتے ہیں ، بہر حال اب اور کیا کیا بتائیں بس اتنا ہی کہ اللہ کرے ہم کیا سب ہی فیس بک یونہی استعمال کرتے رہیں تاکہ اچھے اچھے لوگوں سے بھی ہمارا نہ صرف رابطہ ہو سکے بلکہ ان سے ملاقات بھی ہو سکے بہر حال اب اور مزید کیا کہیں فی الحال اتنا ہی آپ سے کہ اجازت چاہتے ہیں آپ سے ملتے ہیں جلد ایک بریک کے بعد اللہ نگھبان رب راکھا،

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*